یونیورسٹی آف ہریپور کرپشن کا گڑھ بن گئی، ناجائز جرمانے، لیب اورٹئور کے نام پر فنڈز کی وصولی روز کا معمول

ہریپور (نمائندہ خصوصی) یونیورسٹی آف ہریپور سے آئے روز کرپشن کی کوئی نہ کوئی داستان سامنے آتی رہتی ہے، تازہ ترین اطلاعات کے مطابق مبینہ طور پر یونیورسٹی انتظامیہ نے سائیکالوجی ڈیپارٹمنٹ کے طلباء وطالبات سے ناجائز جرمانوں اور فیسوں کے نام پر بھاری رقوم اکٹھی کرنے کا پروگرام بنا لیا ہے، طلباء وطالبات جب سمسٹر کلیئرنس کے لیے اپنے ڈیپارٹمنٹ گئے تو انہیں بتایا گیا کہ ان پر ایک ہزار روپے فائن ایک ایسے سیمینار میں شرکت نہ کرنے کی وجہ سے کیا گیا ہے جس کو نوٹس بورڈ پر اناؤنس بھی نہیں کیا گیا تھا، مزید یہ کہ طلباء و طالبات سے سپورٹس فنڈز،لیب فنڈز اور یونیورسٹی ٹئور کی مد میں بھی بھاری رقوم کا مطالبہ کیا گیا جبکہ ایسی کوئی لیب پوری یونیورسٹی میں موجود ہی نہیں جس سے سائیکالوجی کے طلباء کوئی فائدہ اٹھاتے ہوں، اس ڈیپارٹمنٹ کے طلباء و طالبات نے پورے سمسٹر کے دوران کوئی تعلیمی دورہ نہیں کیا، اسی طرح سپورٹس کی بھی کوئی ایکٹیویٹی نہیں ہوئی. اس سلسلے میں جب طلباء و طالبات نے وائس چانسلر سے رابطہ کیا تو انہوں نے کہا کہ یہ آپ کا اور آپ کے ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ کا معاملہ ہے،میں اس سلسلے میں کچھ نہیں کرسکتا،عوامی حلقوں نے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ تعلیم کے نام پر ہونے والی اس کرپشن کا نوٹس لیا جائے اور فی الفور طلباء و طالبات پر ناجائز عائد کیے جانے والے جرمانے اور فنڈز معاف کیے جائیں

اپنا تبصرہ بھیجیں