فوج نے 1 ارب 59 لاکھ کا چندہ دے دیا، وزیر اعظم نے نگرانی خود کرنے کا اعلان کر دیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر باجوہ اور ڈائریکٹر جنرل انٹرسروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) لیفٹیننٹ جنرل نوید مختار پیر کے روز سپریم کورٹ پہنچے اور چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار سے ملاقات کی۔
ترجمان سپریم کورٹ کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے ملاقات کے دوران انہوں نے چیف جسٹس کے دیامیربھاشا اور مہمند ڈیم منصوبوں پر فنڈز اکھٹا کرنے کی کاوشوں کو خوب سراہا اور پاک فوج کی جانب سے ایک ارب 59 لاکھ روپے کا چیک پیش کیا۔
اس سے قبل جنرل قمر باجوہ نے چیف جسٹس کو ایک مراسلے میں پاک فوج کے تمام افسران کی جانب سے دو دن جبکہ سپاہیوں کی طرف سے ایک دن کی تنخواہ ڈیم فنڈ میں جمع کرانے کی تصدیق کی۔
مراسلے میں آرمی چیف نے بتایا کہ پاک فوج کے افسران اور جری جوانوں کی جانب سے جمع کرائی گئی کل رقم ایک ارب روپے سے زیادہ بنتی ہے۔
مراسلے میں جنرل قمر باجوہ نے بتایا ہے کہ فنڈز میں فوج کے جوانوں کے علاوہ پاک فوج کے زیر انتظام کام کرنے والے فلاحی اداروں نے بھی بڑھ چڑھ کر ڈیم فنڈ کے لیے پیسہ جمع کرایا۔
جسٹس ثاقب نثار نے آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی کا سپریم کورٹ آمد پر شکریہ ادا کیا اور ڈیم کی تعمیر میں پاک فوج کے کردار کی بھرپور انداز میں تعریف کی۔
دوسری طرف وزیر اعظم عمران خان نے اعلان کیا ہے کہ ڈیم کی تعمیرکی نگرانی وہ خود کریں گے۔
انہوں نے یہ بات چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) مزمل حسین سے ملاقات کے موقع پر کہی ۔ اس موقع پر چیئرمین واپڈا نے پانی و بجلی کے منصوبوں کے متعلق وزیراعظم کو بریفنگ بھی دی۔
وزیر اعظم عمران خان نے چیئرمین واپڈا سے اپنی ملاقات کی تفصیل سماجی رابطہ کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بھی جاری کی جس میں ان کا کہنا تھا کہ ڈیم کی تعمیر کی نگرانی وہ خود کریں گے۔
ملاقات کے دوران وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا پاکستان میں 185 ڈیمز ہیں جن میں سے صرف دو بڑے ڈیم ہیں جب کہ پاکستان کے مقابلے میں بھارت کے پاس پانچ ہزاراور چین میں 84 ہزار ڈیمز ہیں۔
ٹی وی رپورٹ کے مطابق مطابق وزیر اعظم عمران خان نے چیئرمین واپڈا سے موجودہ آبی ذخائر کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے حصے میں سالانہ 45 ملین ایکڑ فٹ پانی آتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو ملنے والے پانی کا 80 فیصد تین ماہ میں جب کہ بقیہ 20 فیصد باقی نو ماہ میں آتا ہے۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ہمیں پاکستان کو بڑھتے ہوئے آبی بحران سے محفوظ بنانا ہے۔
پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پانی کے بحران کے خاتمے کے لیے ہنگامی بنیادوں پر کوششوں کی ضرورت ہے۔
انہوں نے چیئرمین واپڈا کو دیا میر بھاشا ڈیم سمیت دیگر منصوبوں کی تکمیل ترجیحی بنیادوں پر کرنے کے لیے ہدایات دیں اور کہا کہ ڈیموں کی تعمیر کے معاملے کی افادیت کے پیش نظر منصوبے کی نگرانی میں اپنے ذمے لے سکتا ہوں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں